ْکرونا وبا کے پیش نظرجماعت اسلامی نے دو ہفتوں کیلئے عوامی جلسے ملتوی کردیئے ہیں‘سراج الحق

32


لاہور(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین – این این آئی۔ 29 نومبر2020ء) امیر جماعت اسلامی سینیٹر سراج الحق نے کہا ہے کہ پی ٹی آئی اور پی ڈی ایم میں کوئی فرق نہیں ،مسلم لیگ ،پیپلز پارٹی اور پی ٹی آئی امریکی غلاموں کے ٹولے ہیں،یہ ملک کو امریکی اور آئی ایم ایف کی ڈکٹیشن پر چلانا چاہتے ہیں، ملک پر 43ہزار ارب روپے کے قرضے لاد دیئے گئے ہیں،ملک میں مافیاز کی حکومت ہے ،چینی ،آٹا ،ڈرگ ،پٹرول اورلینڈ مافیا وزیر اعظم کے ارد گرد موجود ہیں،یہ کارخانوں کی بجائے لنگر خانے کھولنے کو اپنی کامیابی سمجھتے ہیں،وہ وقت دور نہیں جب ملک و قوم کو ان نااہل اور نالائق حکمرانوں سے نجات ملے گی اور بے روز گاری ہے ،ان کے دلوں میں خوف خدا ہے اور نہ عشق مصطفی ؐ ،ناموس رسالت ؐ کے مجرموں کو یہ پروٹوکول کے ساتھ بیرون ملک بھیج دیتے ہیں،حکومت جھوٹ اور یوٹرن کو اپنی کامیابی سمجھتی ہے ،جلسہ جلوس کرنا اپوزیشن کا جمہوری حق ہے ،کرونا سے ڈرانے والی حکومت نے خود سرکاری خرچ پر گلگت بلتستان میں 12جلسے کئے،حکومت ڈکٹیٹر نہ بنے اور پی ڈی ایم کو ملتان میں جلسہ کرنے دے ،کرونا وبا کے پیش نظرجماعت اسلامی نے دو ہفتوں کیلئے عوامی جلسے ملتوی کردیئے ہیں،وزیر اعظم کہتے تھے کہ اگر میرے خلاف کوئی احتجاج کرے گاتو میں انہیں کنٹینر دونگا ،اب حکومت لوگوں کو گھروں سے اٹھا رہی ہے تاکہ خوف کی وجہ سے لوگ حکومت کے خلاف احتجاج نہ کریں،اس سے قبل کہ لوگ اسلام آباد کا رخ کریں حکومت کو اپنا قبلہ درست کرنا ہوگا۔

()

ان خیالات کا اظہار انہوں نے دیر پائین میں بڑے عوامی جلسہ سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔جلسہ سے امیر جماعت اسلامی کے پی کے سینیٹر مشتاق احمد خان ، آصف لقمان قاضی ،مولانا عبدالاکبر چترالی، سابق ایم این اے صاحبزادہ یعقوب خان ، طارق اللہ ، اعزاز الملک افکاری نے بھی خطاب کیا ۔ سیکرٹری جنرل کے پی کے عبدالواسع ، حنیف اللہ خان امیر ضلع دیر بالا ، مرکزی سیکرٹری اطلاعات قیصر شریف بھی موجود تھے ۔سینیٹر سراج الحق نے کہاکہ حکومت نے مقبوضہ کشمیر کو فتح کرنے کی بجائے سرکاری وسائل سے گلگت بلتستان کو فتح کرلیا ہے ۔پی ٹی آئی کا ساتھ دینے والوں کو عوام کی نفرت کا سامنا ہے ،انتخابات بار بار ہائی جیک ہونے کی وجہ سے عوام کا انتخابی نظام پر اعتماد ختم ہوچکا ہے ۔1970سے جماعت اسلامی کی انتخابی کامیابیوں کو روکنے کیلئے ریاستی وسائل استعمال کئے جارہے ہیں ۔انہوں نے کہا کہ ہم امریکہ یا اسٹیبلشمنٹ کی مدد سے نہیں عوام کی قوت سے اقتدار میں آئیں گے ۔انہوں نے کہا کہ حکومت نے عوام کو کرونا سے بچانے کیلئے پہلے کچھ کیا تھا نہ اب کررہی ہے۔حکومت عوام کو ماسک اور سینی ٹائزر تو دے نہیں سکی،کرونا سے بچائو کیلئے باہر سے آنے والے فنڈز کا ستاسی فیصد حکومت نے اپنے کاموں میں استعمال کیا ۔حکمرانوں کے نزدیک کرونا سے بچائو کا ایک ہی حل ہے کہ سکول اور کاروبا ر بند کرکے بیٹھ جائو۔سینیٹر سراج الحق نے کہا کہ مہنگائی کی وجہ سے زندگی گزارنا مشکل ہو رہا ہے۔مہنگائی اور بے روزگاری میں روز بروز اضافہ ہو رہا ہے۔وزیر اعظم آئے روز عوام کو معیشت اوپر اٹھنے کے سبز باغ دکھا رہے ہیں ۔انہوں نے کہا کہ معیشت کی بہتری اس دن خود بخود نظر آجائے گی جس دن عوام کو ریلیف ملے گا اور غریب کو آٹا چینی گھی اور دالیں سستے داموں ملنے لگیں گی۔انہوں نے کہا کہ عوام نے فیصلہ کرلیاہے کہ ان حکمرانوں سے چھٹکارا پانا ہے۔پی ٹی آئی حکومت آٹا چینی اور پیٹرول مافیاز کے سامنے بے بس اور ہر محاذپر ناکام ہو چکی ہے۔ایک کروڑ ملازمتیں دینے کا وعدہ کرنے والوں نے ظلم و جبر کا مظاہرہ کرتے ہوئے ساڑھے چار ہزار اسٹیل ملز ملازمین کا روز گار چھین لیا ہے۔اوور سیز پاکستانی حکومت کے رویے سے سخت پریشان ہیں۔انہوں نے کہاکہ عوام نے باری باری سب کو آزمالیا ہے اب جماعت اسلامی ہی بیسٹ آپشن ہے ۔جماعت اسلامی پاکستان کواسلامی و فلاحی پاکستان بنانے کی جدوجہد کررہی ہے تاکہ عوام کو تعلیم صحت ،روز گار اور یکساں انصاف مل سکے ۔ سینیٹر مشتاق احمد خان نے کہاکہ سٹیل ملز کے 4500ملازمین کو جبراً ریٹائر کر کے ان کا معاشی قتل کیا گیا ۔ یہ مزدور اور کسان کا نہیں ، مافیا کا پاکستان ہے ۔ سٹیل ملز کھربوں روپے منافع کمانے والا ادارہ تھا مگر مافیا اس کو کھا گیاہے ۔یہ سٹیل مل پورے ایشیا کو لوہا دے سکتی تھی ۔ انہوںنے کہاکہ ریپ کے مجرموں کو سرعام پھانسی پر لٹکایا جائے ۔ اگر حکومت نے اس پر عمل نہ کیا تو معصوم بچوں اور بچیوں کے قتل کے مقدمات حکمرانوں کے خلاف درج کروائے جائیں گے ۔ حکمران امریکہ اور مغرب کی خوشنودی کے لیے قرآن وسنت کے احکامات سے انحراف کر رہی ہے ۔ حکومت کا یہ باغیانہ رویہ اللہ کے عذاب کو دعوت دے رہاہے ۔ انہوںنے کہاکہ فرانس کے سفیر کو نہ نکالا تو عمران خان ناموس رسالت ؐ کے غدار کے طور پر پہچانے جائیں گے ۔



Source link

Credits Urdu Points