الوداع وائٹ ہاﺅس الوداع،ٹرمپ کا بوریا بستر گول

39


واشنگٹن ۔ (اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 24 نومبر2020ء) جوبائیڈن امریکہ کے نئے صدر منتخب ہو چکے اور ڈونلڈ ٹرمپ کے حصے میں شکست آئی ہے مگر ڈونلڈ ٹرمپ نے شکست اتنی آسانی سے تسلیم نہیں کی بلکہ اپنے تئیں تو اس نے ’ناگن ڈانس‘ کر ڈالا تھا کہ دھاندلی ہو گئی،ووٹ چوری ہو گئے، دھوکا کیا گیا،نہیں مانوں گااور پتا نہیں کیا کیا۔مگر اب ڈونلڈ ٹرمپ نے شکست تسلیم کرتے ہوئے وائٹ ہائوس خالی کرنے کا عندیہ ظاہر کر دیا ہے۔ اقتدار کا نشہ جس کو بھی لگ جائے پھر وہ کہیں چین نہیں پاتا۔یہی وجہ ہے کہ امریکہ کے صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے الیکشن جیتنے کے لیے دھاندلی کا الزام لگایا، امریکی سپریم کورٹ رجوع کیا اور اسٹیبلشمنٹ کی منتیں ترلے کیے مگر ہاتھ کچھ نہیں آیا اور بالآخر اسے وائٹ ہاﺅس خالی کرنا ہی پڑ گیا۔

()

امریکہ کی جنرل سروسز ایڈمنسٹریشن نے نئے منتخب امریکی صدر جوبائیڈن کو مراسلہ لکھ دیا ہے کہ ڈونلڈ ٹرمپ وائٹ ہاﺅس خالی کرنے کے لیے تیار ہے اور ٹرمپ کی ٹیم اقتدار پرامن اور قانونی طریقے سے انتقال کے لیے ریڈی ہے۔

اس لیٹر نے ڈونلڈ ٹرمپ کی شکست کو تسلیم کرنے پر مہر ثبت کر دی ہے جس نے دھاندلی کا شور مچا رکھا تھا۔ ایڈمنسٹریٹر ایملی مرفی کا کہنا تھا کی انتقال اقتدار کے عمل میں مجھ پر کسی قسم کا کوئی پریشر یا دباﺅ نہیں تھا بلکہ یہ میں نے اپنی مرضی اور قانون کے مطابق کیا ہے۔ میں فیصلہ لینے میں خود مختار تھی اور امریکی قانون کو فالو کرنا میری آئینی ذمہ داری ہے۔اب اس مراسلے کے بعد وائٹ ہاﺅس کی اس وقت کی حکومتی ٹیم اور نئے صدر کی طرف سے بنائی گئی امریکہ کی اگلی حکومت کی ٹیم آپس میں ملاقاتیں اور گفت و شنید کریں گے۔اب کچھ دنوں تک جوبائیڈن وائٹ ہاﺅس میں ڈیرے ڈالیں گے اور دنیا پر راج کریں گے۔´جوبائیڈن کے صدر بننے اور اس کی دیگر ممالک کے حوالے سے پالیسیز کو کئی لوگ عمیق نظروں سے تاک رہے ہیں کہ وائٹ ہاﺅس سے کس قسم کے نئے اعلانات سامنے آتے ہیں۔پاکستان،انڈیا،سعودی عرب،اسرائیل اور فلسطین کا کنسرن کچھ تنازعات کی بنا پر دنیا کے دیگر ممالک سے زیادہ ہے کہ وائٹ ہاﺅس کی تبدیلی خطے پر کس طرح سے اثر انداز ہو گی۔



Source link

Credits Urdu Points