جوبائیڈن کی کال اب غیر ضروری ہو چکی ہے، ہم امریکا کی کال کا انتظار نہیں کر رہے

14


اسلام آباد ( اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین ۔ 21 جنوری 2022ء ) وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی کا کہنا ہے کہ امریکی صدر جوبائیڈن کی کال اب غیر ضروری ہو چکی ہے۔انہوں نے سماء نیوز کے پروگرام ندیم ملک لائیو میں گفتگو کرتے ہوئے مزید کہا کہ ضمنی مالیات بل کی منظوری سے حکومتی صفوں میں انتشار کا ان کا اندازہ غلط ثابت ہوا،اپوزیشن مجوزہ تحریک عدم اعتماد کا سامنا کرنے کے لیے تیار ہیں۔ہمیں اپنے اتحادیوں پر اعتماد ہے، ساتھ نہیں چھوڑیں گے۔شاہ محمود قریشی نے کہا کہ مجھے نہیں لگتا حلیف ہمیں ن لیگ اور پیپلز پارٹی کے لیے چھوڑیں گے۔انہوں نے کہا کہ ہماری کوشش ہوتی ہے حلیفوں کی توقعات پر پورا اتریں۔انہوں نے کہا تحریک انصاف کے ووٹرز عمران خان سے الگ نظریے والے شخص کو قبول نہیں کرے گا۔

()

پیپلز پارٹی کے اہم اختیارات ابھی بھی آصف زرداری کے پاس ہیں، پیپلز پارٹی نے پی ڈی ایم میں دباؤ محسوس کیا۔

وزیر خارجہ نے مزید کہا کہ اسٹیٹس کو ہمارے راستے کی دیوار ہے،امید ہے جلد یہ دیوار ٹوٹے گی۔انہوں نے کہا کہ ایف اے ٹی ایف کی قانون سازی ریاست کے لیے تھی حکومت کے لیے نہیں۔انہوں نے کہا کہ نیب اصلاحات پر بات چیت کے لیے تیار ہیں مگر اپوزیشن نیب قانون کو ملیا میٹ کرنا چاہتی ہے۔وزیر خارجہ نے کہا کہ جنوبی پنجاب صوبہ بننے سے فیڈریشن مضبوط ہو گی۔باتیں تو 70 دہائی سے ہو رہی ہیں مگر پی ٹی آئی نے عملی جامہ پہنایا۔انہوں نے کہا کہ بلاول بھٹو اور شہباز شریف کو جنوبی پنجاب صوبے کے معاملے پر خط وزیراعظم کی مشاورت سے  لکھا۔ انہوں نے کہا سعودی عرب کے ساتھ اچھے تعلقات برقرار رہیں گے تاہم جوبائیڈن کی کال اب غیر ضرووری ہو چکی ہے، ہم امریکا کی کال کا انتظار نہیں کر رہے۔جوبائیڈن اگر نجی مصروفیات میں الجھے ہوئے ہیں تو ہمیں بھی بات چیت میں جلدی نہیں ہے۔ انہوں نے کہا کہ پاک امریکا تعلقات میں برف پگھل چکی ہے جو وقت کے ساتھ ظاہر ہوتی جائے گی، شاہ محمود قریشی نے کہا کہ امریکا پاکستان کی اہمیت سے انکار نہیں کر سکتا کیونکہ ہم نے جب بھی مل کر کوئی کام کیا اس کا فائدہ دونوں ممالک کو ہوا۔ وزیر خارجہ نے کہا کہ عسکری اداروں نے ہر مرحلے پر حکومت کو سپورٹ کیا۔سی ییک ہماری ترجیح تھی اور رہے گی،سی پیک پروجیکٹ میں کوئی مسئلہ نہیں آیا۔



Source link

Credits Urdu Points