کل جماعتی حریت کانفرنس کا او آئی سی اجلاس میں کشمیر سے متعلق قرارداد کی منظوری پر اظہار اطمینان

39


سرینگر(اُردو پوائنٹ اخبارتازہ ترین – این این آئی۔ 29 نومبر2020ء) غیر قانونی طور پر بھارت کے زیر قبضہ جموں و کشمیر میں کل جماعتی حریت کانفرنس نے نائجر کے شہرنیامی میں اسلامی تعاون تنظیم کے وزرائے خارجہ کونسل کے اجلاس میں کشمیریوں کے ناقابل تنسیخ حق ،حق خود ارادیت کے حق میں قرارداد منظورکرنے پر اطمینان کا اظہار کیا ہے۔ کشمیرمیڈیاسروس کے مطابق کل جماعتی حریت کانفرنس کے جنرل سیکریٹری مولوی بشیر احمد نے اتوار کو سرینگر میں جاری ایک بیان میں کشمیر کاز کے لئے مسلم ممالک کی حمایت حاصل کرنے کی کوششوں پر پاکستان کا شکریہ اداکیا۔ انہوں نے کہا کہ مقبوضہ کشمیر میں صورتحال سنگین ہے جہاں بھارتی فوجی منظم انداز میں انسانی حقوق کی پامالیاں کررہے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان کے وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے بہت اچھے طریقے سے مسلم ممالک کی توجہ کشمیری عوام کو درپیش مشکلات کی طرف مبذول کروائی ہے اور اب دنیا کو کشمیریوںکو بین الاقوامی سطح پر تسلیم شدہ ان کاحق خودارادیت دلانے کے لئے آگے آنا چاہئے۔

()

حریت رہنماؤں عبد الصمد انقلابی اور غلام نبی درزی نے اپنے بیانات میں کشمیریوں کو نسل کشی سے بچانے کے لئے او آئی سی پر مزید موثر کردار اداکرنے پر زوردیا۔تحریک حریت جموں و کشمیر نے اتوار کو سرینگر میں جاری ایک بیان میں کہا کہ مقبوضہ جموں و کشمیر جہاںغیر ضروری قتل وغارت، نظربندیاں ، تشدد اور گمشدگیاں بدستور جاری ہیں،تاریخ کا سب سے بڑا انسانی المیہ بن گیا ہے۔ بیان میں کہا گیا ہے کہ دیرینہ تنازعہ کشمیر کو حل کرنے کے لئے مخلصانہ سوچ کے ساتھ بامقصد اور نتیجہ خیز مذاکراتی عمل شروع کرنا ہی آگے بڑھنے کا واحد راستہ ہے۔ تحریک حریت نے پارٹی چیئرمین محمد اشرف صحرائی کی مسلسل غیر قانونی نظربندی کی مذمت کی۔دریں اثناء کشمیرمیڈیاسروس کی طرف سے اتوار کو جب دنیا فلسطینی عوام کے ساتھ یوم یکجہتی منارہی ہے، جاری کی گئی ایک تجزیاتی رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ بھارت مقبوضہ جموں و کشمیر میں تحریک آزادی کو دبانے کے لئے اسرائیلی نقش قدم پر چل رہا ہے۔ رپورٹ میں جو کشمیر اور فلسطین کے ماہرین کے انٹرویوز اور بیانات پر مبنی ہے ، کہا گیا ہے کہ بھارت اور اسرائیل کشمیر اور فلسطین میں اپنے قبضے کے ہتھکنڈوں کو مربوط بنانے کے لئے تعاون میں اضافہ کر رہے ہیں۔ انہوں نے زور دے کر کہا کہ عالمی امن و استحکام کشمیر اور فلسطین تنازعات کے حل سے منسلک ہے۔ یہاں یہ امر قابل ذکر ہے کہ اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی نے 29 نومبر 1977 کو فلسطینی عوام کے ساتھ عالمی یوم یکجہتی منانے کا اعلان کیاتھا۔میر واعظ عمر فاروق کی سربراہی میں قائم حریت فورم نے ایک بیان میں اور جموں و کشمیر پیپلز لیگ نے سرینگر میں ایک اجلاس میں میر واعظ عمر فاروق کے چچا مولوی علی محمد جان کے انتقال پر رنج و غم کا اظہار کیا۔



Source link

Credits Urdu Points