وفاقی حکومت نے گندم کی امدادی قیمت میں200 روپے فی من اضافہ کردیا

20


اسلام آباد (اردوپوائنٹ اخبارتازہ ترین۔ 26 اکتوبر2020ء) وفاقی حکومت نے گندم کی فی من امدادی قیمت میں200 روپے اضافہ کردیا ہے، گندم کی نئی امدادی قیمت 1600 فی من مقرر کی گئی ہے۔ گندم کی پرانی امدادی قیمت 1400 روپے فی من تھی۔ اعلامیہ کے مطابق مشیر خزانہ کی زیرصدارت اقتصادی رابطہ کمیٹی کا اجلاس ہوا۔ جس میں گندم کی امدادی قیمت سولہ سو فی من مقرر کرنے کی منظوری دے دی گئی ہے۔ اس سے قبل گندم کی امدادی قیمت 1400 فی من تھی۔ 2010سے اب تک چار گندم کی امدادی قیت میں نظر ثانی کی جاچکی ہے۔ اجلاس میں گندم کی درآمد کا حجم 18 لاکھ میٹرک ٹن مقرر کیا گیا ہے۔ روس سے 3 لاکھ میٹرک ٹن گندم درآمد کرنے کی منظوری دی گئی ہے۔ جبکہ وزارت فوڈ کی جانب سے روس سے مزید 3 لاکھ 20 ہزار میٹرک ٹن گندم درآمد کرنے کی تجویز دی گئی ہے۔

()

دوسری جانب محکمہ زراعت نے گندم کی بوائی کا شیڈول جاری کردیا ہے۔

ترجمان کے مطابق 30 نومبر تک کاشت کے لئے شرح بیج 50 کلوگرا م فی ایکڑ رکھی جائے۔ آبپاش علاقوں میں محکمہ زراعت کی سفارش کردہ اقسام اکبر19، غازی19، بھکر سٹار، فخر بھکر، اناج2017، زنکول2016 ، گولڈ 2016، جوہر2016، بورلاگ 2016 ، اجالا2016 ، آس 2011 کا شت کریں۔ پنجاب سیڈ کارپوریشن کے ڈپوؤں یا مستند ڈیلروں سے ان اقسام کا بیج حاصل کیا جاسکتا ہے۔ کاشتکاران اقسام کا گھریلو پیمانے پر تیار کردہ بیج گریڈ کرائیں اور بیج کو بوائی سے قبل تھائیو فنیٹ میتھائل بحساب 2 گرام فی کلو گرام بیج زہر لگائیں۔ آبپاش علاقوں کی کمزور زمینوں میں دو بوری ڈی اے پی، دو بوری یوریا اور ایک بوری ایس او پی فی ایکڑ، اوسط درجہ کی زمینوں میں ڈیڑھ بوری ڈی اے پی، پونے دو بوری یوریا اور ایک بوری ایس او پی فی ایکڑجبکہ زرخیز زمینوں میں سوا بوری ڈی اے پی،ڈیڑھ بوری یوریا اورایک بوری ایس او پی فی ایکڑ بوقت کاشت ڈالی جائے۔



Source link

Credits Urdu Points